• اکتوبر 20, 2020

موٹروے زیادتی کیس:ملزم شفقت 6 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کےحوالے

لاہور: موٹر وے زیادتی کیس کے ملزم شفقت کو 6 روز کے جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کی سیشن کورٹ میں کیس کی سماعت ہوئی جس میں پولیس نے ملزم شفقت کو عدالت کے روبرو پیش کیا۔ پولیس نےعدالت کوبتایا کہ واقعے کا مقدمہ خاتون کے عزیز سردار شہزاد کی مدعیت میں درج کیا گیا جس میں دہشت گردی کی دفعات بھی شامل کی گئی ہیں۔ ملزم شفقت کو پولیس نے اے ٹی سی کی عدم دستیابی کے باعث سیشن کورٹ میں پیش کیا گیا ۔ سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ موٹروے کیس کے ملزم شفقت نے اعتراف جرم کر لیاہے اور اس کی نشاندہی پر دیگر ملزمان کو ابھی گرفتار کرنا باقی ہے، مرکزی ملزم عابد کی گرفتاری کیلئے تاحال چھاپے مار ے جارہے ہیں ، ملزم سے مزید تفتیش کیلئے چھ روز کا ریمانڈ دیا جائے ۔ جس کے بعد عدالت نے تفتیشی افسر کی چھ روز کے جسمانی ریمانڈ کی درخواست قبول کرتے ہوئے شفقت کو پولیس کے حوالے کر دیا ۔
دوسری جانب موٹر وے خاتون زیادتی کیس میں تحقیقات کا سلسلہ جاری ہے اور آج  پولیس نے ایک اور ملزم کو گرفتار کر لیا ہے۔ مرکزی ملزم عابد کا ساتھی اقبال عرف بالا مستری کو سی آئی اے نے وقار اور عباس کی نشاندہی پر حراست میں لیا گیا ۔حکام کے مطابق ملزم بالامستری واقعے سے پہلے عابد کے ساتھ متعدد وارداتوں میں ملوث رہا،ملزم واردات کے روز راستے سے ہی واپس چلا گیا تھا ، بالا مستری کی گرفتاری سے عابد کو ڈھونڈا آسان ہو گا ، اس کے قبضہ سے دس موبائل سمیں برآمد ہوئیں ہیں جن کے ذریعے یہ عابد کے ساتھ رابطے میں تھا ۔
موٹروے زیادتی کیس میں دو روزقبل ایک اور ملزم شفقت کو گرفتار کیا گیا تھاجسے خود سے گرفتاری دینے والے ملزم وقارالحسن کی نشاندہی پر گرفتار کیا گیا تھا۔ شفقت کو دیپالپور سے حراست میں لیا گیا اور اسے لاہور منتقل کردیا گیا تھا۔ملزم شفقت سابقہ ریکارڈ یافتہ ہے اور اس نے پولیس کے سامنے اعتراف جرم کر لیا ہے اور شفقت کا ڈی این اے ٹیسٹ بھی میچ کر گیا ہے۔
ملزم شفقت نے پولیس کو اپنا بیان ریکارڈ کرادیا، جس میں شفقت نے اعتراف کیا ہے کہ 9 ستمبر کو وہ اور عابد ڈکیتی کی غرض سے گاڑی کے پاس گئے، پہلےخاتون سےلوٹ مار کی اور پھرزیادتی کا نشانہ بنایا۔ شفقت کا والد اللہ دتہ بھی پولیس کی حراست میں ہے، پولیس کا کہنا ہے کہ موبائل سم اللہ دتہ کے نام پرہے جو بیٹا استعمال کررہاتھا،شفقت کو گرفتار کرکے ڈی این اے کرایاگیا، رپورٹ آنے کے بعد مزید حقائق سامنے آئیں گے۔
 شفقت کی گرفتاری کے بعد کیس کے مرکزی ملزم عابد پر بھی گھیراتنگ ہوگیا ہے اور پولیس عابدکی تلاش میں جگہ جگہ چھاپےمار رہی ہے جبکہ عابد کے والداوردوبھائیوں سےتفتیش جاری ہے۔اس سے قبل کیس کے نامزد ملزم وقارکے برادرنسبتی عباس نے بھی شیخوپورہ میں پولیس کو گرفتاری دی تھی ، عباس نے ویڈیو بیان میں جرم ماننے سے انکار کرتے ہوئے کہا تھا کہ میں بے گناہ ہوں، خودکوپولیس کےسامنےپیش کر رہا ہے، امیدہے پولیس ناجائزنہیں کرے گی۔
واضح رہے کہ تھانہ گجرپورہ پولیس کے مطابق منگل اور بدھ کی درمیانی شب خاتون اپنے بچوں کے ہمراہ لاہور سے گوجرانوالہ جارہی تھی۔ راستے میں پٹرول ختم ہوا تو خاتون نے گاڑی کھڑی کردی۔ اس دوران دو نامعلوم افراد آئے اور خاتون کو بچوں سمیت قریبی کھیتوں میں لے گئے۔ ملزمان نے بچوں کے سامنے خاتون کا زیادتی کا نشانہ بنایا اورنقدی لے کر فرار ہوگئے  تھے ۔

0 Reviews

Write a Review

Read Previous

روایتی حریفوں آسٹریلیا اور انگلینڈ کے درمیان فیصلہ کن جوڑ کل پڑے گا

Read Next

کابینہ ارکان نے جنسی درندوں کو سخت سزائیں دینے کا مطالبہ کر دیا

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے