• مئی 24, 2022

فیصل واوڈا کی سیاست میں اتار چڑھاو ، کب کیا ہوا؟

FEDERAL MINISTER FOR WATER RESOURCES, MUHAMMAD FAISAL VAWDA ADDRESSING A PRESS CONFERENCE IN ISLAMABAD ON OCTOBER 22, 2018.

قومی اسمبلی کی رکنیت چھوڑی۔سینیٹربنے۔ پھروزارت سے الگ ہوئے اوراب نااہلی کا سامنا کرنا پڑگیا۔ فیصل واوڈا کی سیاست میں اتارچڑھاو آتا رہا۔

فیصل واوڈا نے 3 مارچ 2020 کو چیئرمین سینیٹ کے انتخابات میں بطوررکن قومی اسمبلی ووٹ ڈالا۔

فیصل واوڈا کےخلاف نااہلی کیس اسلام آباد ہائیکورٹ میں بھی چلا۔عدالت میں ان کے وکیل کی جانب سے استعفیٰ جمع کراتے ہوئے یہ کہا گیا تھا کہ فیصل واوڈا مستعفی ہوگئے ہیں اس لیے درخواست غیرموثرہوچکی۔

اسلام آبادہائیکورٹ نے 3 مارچ کو ہی نااہلی کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے قرار دیا تھا کہ فیصل واوڈا کے مستعفی ہونے کے باعث انہیں نااہل قرار نہیں دیا جا سکتا۔جھوٹے بیان حلفی کے معاملے پرالیکشن کمیشن فیصلہ کرے۔

فیصل واوڈا نے 9 مارچ کو وزارت آبی وسائل کا قلمدان چھوڑ دیا۔ الیکشن کمیشن نےآج  دہری شہریت کے کیس پر فیصلہ سناتے ہوئے انہیں نا اہل قرار دے دیا ہے۔

واضح رہے کہ فیصل واوڈا نے 2018 میں تحریک انصاف کے ٹکٹ پرکراچی سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 249 بلدیہ ٹائون سے مسلم لیگ (ن) کے صدرشہباز شریف کے مقابلے میں الیکشن لڑا اورکامیاب ہوئے۔

0 Reviews

Write a Review

Read Previous

31 مارچ کے اختتام تک پورے پنجاب کو صحت کارڈ کی سہولت مل جائیگی: عثمان بزدار

Read Next

آسکر ایوارڈز 2022 کی نامزدگیوں کا اعلان ہو گیا

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے